دل تو ہر بات پہ رونے کے بہانے مانگے

ہم تو ہنستے ہیں فقط چاہنے والوں ک لئے
دل تو ہر بات پہ رونے کے بہانے مانگے

تلخیٴ زیست سے گھبرا ئے تو اے دل ہم نے
میٹھی نیندوں سے تھےکچھ خواب سہانے مانگے

ہتھکڑی پیش کی مانگے جو کبھی بھی گہنے
قید رکھنے کو بھی صیاد بہانگے مانگے

لوگ بھولے ہیں تیرا قصہ تو حیراں کیوں ہے
نت نئے روز یہ دنیا تو فسانے مانگے

درد سےیوں ہوا مانوس کہ گانے کے لئے
دل مرا روز نئے غم کے ترانے مانگے

دل۔بیتاب کو ملتا نہیں محفل میں قرار
دور ویرانوں میں مجھ سے یہ ٹھکانے مانگے

گر وہ مل جائیں کہیں ڈر ہے کہ مچل جائے نہ دل
کن غموں کا یہ حساب ان سے نہ جانے مانگے

روز دیتے ہیں نئے اس کو کھلونے پھر بھی
دل وہ ضدی ہے کہ بچپن کے زمانے مانگے

3 thoughts on “دل تو ہر بات پہ رونے کے بہانے مانگے

    • Thanks Quratanna.. My poetry is a cry of an anguished heart! with no formal education of Urdu Shairi I just express my feelings when the urge strikes. I am glad for your appreciation

      • You’re a born writer. Ma shaa Allah :))
        I also didn’t have any formal education of writing Urdu Poetry. :)) I just try. :)) Shukar Alhamdulilah :))❤

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s