سیپ خالی ہمارا مقدر بنے

سیپ خالی ہمارا مقدر بنے
اور موتی نہ جانے کہاں کھو گئے 


جاگتی آنکھوں سے دیکھا تھا جن کو کبھی
وہ سارے سپنے نہ جانے کہاں کھو گئے 


میں وہ تصویر ہوں رنگ جس میں نہیں
رنگ دھنک کے نہ جانے کہاں کھو گئے 


اتنی بے کیف تھی داستان۔حیات
سننے والے نہ جانے کہاں کھو گئے 


پہنچ جائینگے اک دن ہمیں زعم تھا
رستے منزل کے نہ جانے کہاں کھو گئے

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s