زیست کی بساط

Image

زیست کی بساط پر کھاتے رہے یوں مات ہم
کہ دنیا والوں کی طرح جینا ہمیں نہ آئیگا

کس کو ہماری چاہ ہے کس کو دکھائیں ناز ہم
جو روٹھ جائیں ہم کبھی کون ہمیں منائیگا

کس کو بتائوں میں یہاں کہ دل پہ کتنے زخم ہیں
ہے کون چاہ گر مرا، کون مرھم لگایئگا

راہِ وفا کیسی عجب، راہی بھی ہم، راہبر بھی ہم
بھٹک گئے جو ہم کبھی،صحیح راہ کون دکھائیگا 

مرنے کے بعد جو مرے، ذکرچھڑ گیا مرا
مرا خیال دل پہ ترے اک بوجھ سا بن جائیگا

انکہی سی اک بات جو سننے کو منتظر ہوں میں 
گزر گیا جو وقت یہ، پھر لوٹ کر نہ آیئگا

Advertisements

9 thoughts on “زیست کی بساط

  1. کس کو ہماری چاہ ہے کس کو دکھائیں ناز ہم
    جو روٹھ جائیں ہم کبھی کون ہمیں منائیگا

    Story of lonesome has beautified in these words. :))

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s