تم نہ جان پائوگے

 

شہر کے دوکاندارو ۔۔۔۔۔ کاروبارِ اُلفت میں
سود کیا، زیاں کیا ہے ۔۔۔۔۔ تم نہ جان پاؤ گے
دل کے دام کتنے ہیں ۔۔۔۔۔ خواب کتنے مہنگے ہیں
اور نقدِ جاں کیا ہے ۔۔۔۔۔۔ تم نہ جان پاؤ گے

کوئی کیسے ملتا ہے ۔۔۔۔۔ پھول کیسے کھلتا ہے
آنکھ کیسے جُھکتی ہے ۔۔۔۔۔ سانس کیسے رُکتی ہے
کیسے رِہ نکلتی ہے ۔۔۔۔۔۔ کیسے بات چلتی ہے
شوق کی زباں کیا ہے ۔۔۔۔۔۔ تم نہ جان پاؤ گے

وصل کا سکوں کیا ہے ۔۔۔۔۔ ہجر کا جنوں کیا ہے
حُسن کا فسُوں کیا ہے ۔۔۔۔۔ عشق کے درُوں کیا ہے
تم مریضِ دانائی ۔۔۔۔۔ مصلحت کے شیدائی
راہِ گمراہاں کیا ہے ۔۔۔۔۔۔ تم نہ جان پاؤ گے

زخم کیسے پھلتے ہیں ۔۔۔۔۔ داغ کیسے جلتے ہیں
درد کیسے ہوتا ہے ۔۔۔۔۔ کوئی کیسے روتا ہے
اشک کیا ہیں، نالے کیا ۔۔۔۔۔ دشت کیا ہیں، چھالے کیا
آہ کیا، فُغاں کیا ہے ۔۔۔۔۔ تم نہ جان پاؤ گے

جانتا ہوں میں تم کو ۔۔۔۔۔ ذوقِ شاعری بھی ہے
شخصیت سجانے میں ۔۔۔۔۔ اِک یہ ماہری بھی ہے
پھر بھی حرف چُنتے ہو ۔۔۔۔۔ صرف لفظ سُنتے ہو
اِن کے درمیاں کیا ہے ۔۔۔۔۔ تم نہ جان پاؤ گے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جاوید اختر

 

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s