اے ناتواں مرے دل

اے ناتواں مرے دل
ہمت نہ ہارنا تو
دو چار اور قدم ہیں
بس سامنے ہے منزل
مانا کہ راہ کٹھن ہے
لمبا بہت سفر ہے
پر مشکلیں یہ تیری
اب ختم ہیں ہونے والی
یہ مانتی ہوں میں کہ
ماضی ترا عجب ہے
حالات کے ستم سے
کچھ دوست کے ستم سے
سب خواب ٹوٹے تیرے
بکھرا تو ریزہ ریزہ
حالت کو تیری چاہا
ہر دم بدلنا میں نے
لیکن یہ کام شاید
تھا میرے بس سے باہر
خوشیوں کی آرزو میں
پھرتا رہا تو برسوں
پر کچھ ہوا نہ حاصل
تجھ کو ان کاوشوں سے
منزل نہ پائی تو نے
لوٹ آیا راستوں سے
پر تو بڑا تھا ضدی
مانی نہ ہار تو نے
دکھ سہہ کے مسکرانا
ہر دم تھا تیرا
بس ہنسنا اور ہنسانا
ہر دم تھا کام تیرا!
پھر کیوں یہ اک تھکن سی
تجھ پہ ہے آج طاری؟r
مایوسیاں یہ کیسی؟
کیسی یہ بیقراری؟
یہ خوں جو رس رہا ہے
زخموں سے آج تیرے
کر دیگا یہی رنگیں
کل تیرے گلستاں کو
کر لے یقین میرا
دکھ کی یہ انتہا ہے
ہوتی ہے انتہا جب
پھر ہوتی ابتدا ہے!
بس تھوڑی اور ہمت
اے ناتواں مرے دل
دو چار اور قدم ہیں
بس سامنے ہے منزل

ماں

 

درد کے صحرا سے لی مٹی

اشکوں کی نہر سے لیا پانی

ہمت وعزم کے پہاڑ کی چوٹی سے

اٹھائی کچھ ان چھوئی پاکیزہ برف

ملایا اس میں پھر کچھ وفا کا رنگ

اور ایثار سے گوندھ کے اٹھایا خمیر

شاید یوں اللہ نے بنایا ہے

ماں کا وجود

خوشی سے سہتی ہے وہ ہر غم

اپنے لال کو دکھوں سے بچانے کے لئے

کرتی ہے وہ اپنی نیند قرباں

اپنے بچے کو چین کی نیند سلانے کے لئے

سائیباں بن جاتی ہے وہ

زندگی کی دھوپ میں

 اللہ کا عکس ہے پنہاں دیکھا

ماں کے ہر اک روپ میں

زندگی بھر ممتا کے دکھ سہتی ہے وہ

اور اکثر یہ بھول جاتی ہے

کہ وہ صرف اک ماں نہیں

انساں بھی ہے !

عورت بھی ہے !

لیکن کبھی یوں بھی ہوتا ہے

ممتا کے دکھوں سہتے سہتے

 تھک سی جاتی ہے وہ

اپنے منصب کو بھول کر

زندگی کے دامن سے

چرانا چاہتی ہے کچھ رنگ

اپنے بے رنگ خوابوں کو سجانے کے لئے

لیکن یہ لغزش ہوتی ہے بس

چند لمحوں کے لئے

کہ فرض کا آہنی ہاتھ

اس کو جھنجھوڑ دیتا ہے

اور یاد دلاتا ہے

کہ

یہ خواہش اسے زیب دیتی نہیں

کہ وہ انساں نہیں

عورت نہیں

پہلے اک ماں ہے

ماں!!

جس کو بنایا ہے اللہ نے

درد سے

اشکوں سے

وفا سے

اور

ایثار سے !

رنج و غم کو اسے گلے لگانا ہے

اور اولاد کے لئے مٹ جانا ہے!

یاسمین الہی

تم نہ جان پائوگے

 

شہر کے دوکاندارو ۔۔۔۔۔ کاروبارِ اُلفت میں
سود کیا، زیاں کیا ہے ۔۔۔۔۔ تم نہ جان پاؤ گے
دل کے دام کتنے ہیں ۔۔۔۔۔ خواب کتنے مہنگے ہیں
اور نقدِ جاں کیا ہے ۔۔۔۔۔۔ تم نہ جان پاؤ گے

کوئی کیسے ملتا ہے ۔۔۔۔۔ پھول کیسے کھلتا ہے
آنکھ کیسے جُھکتی ہے ۔۔۔۔۔ سانس کیسے رُکتی ہے
کیسے رِہ نکلتی ہے ۔۔۔۔۔۔ کیسے بات چلتی ہے
شوق کی زباں کیا ہے ۔۔۔۔۔۔ تم نہ جان پاؤ گے

وصل کا سکوں کیا ہے ۔۔۔۔۔ ہجر کا جنوں کیا ہے
حُسن کا فسُوں کیا ہے ۔۔۔۔۔ عشق کے درُوں کیا ہے
تم مریضِ دانائی ۔۔۔۔۔ مصلحت کے شیدائی
راہِ گمراہاں کیا ہے ۔۔۔۔۔۔ تم نہ جان پاؤ گے

زخم کیسے پھلتے ہیں ۔۔۔۔۔ داغ کیسے جلتے ہیں
درد کیسے ہوتا ہے ۔۔۔۔۔ کوئی کیسے روتا ہے
اشک کیا ہیں، نالے کیا ۔۔۔۔۔ دشت کیا ہیں، چھالے کیا
آہ کیا، فُغاں کیا ہے ۔۔۔۔۔ تم نہ جان پاؤ گے

جانتا ہوں میں تم کو ۔۔۔۔۔ ذوقِ شاعری بھی ہے
شخصیت سجانے میں ۔۔۔۔۔ اِک یہ ماہری بھی ہے
پھر بھی حرف چُنتے ہو ۔۔۔۔۔ صرف لفظ سُنتے ہو
اِن کے درمیاں کیا ہے ۔۔۔۔۔ تم نہ جان پاؤ گے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جاوید اختر

 

آئینہ کا سوال…a ghazal from Ankahi Baatein

aainaa

آ ئینہ دیکھتی ہوں میں تو ٹھٹک جاتی ہوں

ایک انجان سی صورت نظر آتی ہے مجھے

حیراں ہو کر میں کرتی ہوں یہ خود سے سوال

دکھی کر دیتا ہے مجھ کو میرا اپنا ہی سوال

یہ جو چہرہ ہے یہ مرا چہرہ تو نہیں

یہ جو آنکھیں ہیں یہ مری آنکھیں تو نہیں

اس نئے چہرے کا تو لگتا ہے ہر اک نقش اداس

دھواں دیتے نظر آتے ہیں نگاہوں کے چراغ

میری آنکھوں میں تو رہتا تھا تبسم رقصاں

لب پہ رہتی تھی ہنسی کھلتے گلابوں کی طرح

خامشی میں مری ہوتی تھیں ہزاروں باتیں

چہچہاتی پھرتی تھی میں کسی بلبل کی طرح

ہر طرف میں تو جلاتی تھی محبت کے چراغ

میں سمجھتی تھی زندگی خوشیوں کا ہے نام

ہر طرف پھول ہیں مجھ کو کانٹوں سے کیا کام

دکھ کتنے ہیں مقدر میں مجھے معلوم نہ تھا

زندگی کا یہ روپ بھی ہے، سوچا ہی نہ تھا

کھائے جب زخم تو زیست ہے کیا، یہ میں نے جانا

پھر بھی تھے عزم جواں، ہر مشکل کو آسان جانا

ہنس کے سہتی رہی جو زخم زندگی دیتی گئی

اپنے اشکوں کو ھنسی میں میں چھپاتی گئی

شکوہ کرنا نہ کبھی دل کو یہ سمجھاتی رہی

کبھی راہ میں ترے بھی جلینگے محبت کے چراغ

وقت بہت بیت گیا تو میں نے یہ حقیقت جانی

اس جہاں میں وفا کی کوئی قیمت ہی نہیں

تلخیاں گھلتی گئیں کچھ اس طرح دل کے اندر

اک اک کر کے بجھے سب وہ محبت کے چراغ

اب ہے آئینہ اور اک اجنبی چہرہ ہے

جس کے ہر نقش سے ابھرتا ہے اذیت کا سراغ

اور یہ چہرہ مجھ سے کرتا ہے ہردم یہ سوال

ہے کوئی جو کہ دے اس کے سوالوں کا جواب

وقت کے صحرا میں کہاں کھو گیا تیرا وہ وجود

ہر طرف جو کہ جلاتا تھا محبت کے چراغ

WHO ELSE BUT ALLAH!

for blog

بھلا وہ کون ہے کہ جب کوئی بے قرار اسے پکارتا ہے تو وہ اس کی دعا قبول کرتا ہے اور تکلیف دور کردیتاہے؟…..

Who listens to the distressed soul when it calls on Him and Who relieves it’s sufferings

Sural Al Namal..part of ayat no. 62

ZEEST KI BISAAT (FOR MY READERS WHO CAN NOT READ URDU)

Zeest ki Bisaat

 

 Zeest ki bisaat par khaate rahe yun maat hum

Ke dunya waalon ki tarah jeena humein na aayeiga!

 

Kis ko humari chah hai, kis ko dikhaayein naaz hum

Jo rooth jaayein hum kabhee, kon humein munaayeiga?

 

Kis ko bataoon mein yahaan, is dil pe kitne zakhm hain

Hai kon charagar mera, kon marhum lagaaeiga?

Raah e wafa kaisi ajab, raahi bhee hum raahbar bhee hum

Bhatak gaye jo hum kabhee, saheeh raah kon dikhaayeiga?

 

Marne ke baad jab kaheen, zikr jo chir gaya mera

Mera khayaal dil pe tere eik bojh saa ban jaayeiga!

 

Anakahi see eik baat sunne ko muntazir hoon mein

Guzar gaya jo waqt ye phir laut kar naa aayeiga!

ZEEST KI BISAAT!

Zeest ki Bisaat

Zeest ki bisaat par khaate rahe yun maat hum

Ke dunya waalon ki tarah jeena humein na aayeiga

 

Kis ko humari chah hai, kis ko dikhaayein naaz hum

Jo rooth jaayein hum kabhee, kon humein munaayeiga

 

Kis ko bataoon mein yahaan, is dil pe kitne zakhm hain

Hai kon charagar mera, kon marhum lagaaeiga

 

Raah e wafa kaisi ajab, raahi bhee hum raahbar bhee hum

Bhatak gaye jo hum kabhee saheeh raah kon dikhaayeiga

 

Marne ke baad jo kabhee, zikr chir gaya mera

Mera khayaal dil pet ere eil bojh saa ban jaayeiga

 

Anakahi see eik baat sunne ko muntazir hoon mein

Guzar gaya jo waqt ye phir laut kar naa aayeiga!

زیست کی بساط

Image

زیست کی بساط پر کھاتے رہے یوں مات ہم
کہ دنیا والوں کی طرح جینا ہمیں نہ آئیگا

کس کو ہماری چاہ ہے کس کو دکھائیں ناز ہم
جو روٹھ جائیں ہم کبھی کون ہمیں منائیگا

کس کو بتائوں میں یہاں کہ دل پہ کتنے زخم ہیں
ہے کون چاہ گر مرا، کون مرھم لگایئگا

راہِ وفا کیسی عجب، راہی بھی ہم، راہبر بھی ہم
بھٹک گئے جو ہم کبھی،صحیح راہ کون دکھائیگا 

مرنے کے بعد جو مرے، ذکرچھڑ گیا مرا
مرا خیال دل پہ ترے اک بوجھ سا بن جائیگا

انکہی سی اک بات جو سننے کو منتظر ہوں میں 
گزر گیا جو وقت یہ، پھر لوٹ کر نہ آیئگا

DHOKA!

Image

Aaj ghar jo aaye ho ae dost

Chup chup se yoon kyun bethe ho?

Kuch poochna chahte ho jaise

Aankhon mein kyun hai uljhan si

Kuch poochna chahti hon jaise

Kya khojte ho tum yun har su

Aaj aayo dikhaayum mein khud tum ko

Kya mein ne juma kar rakha hai

Ye dil ke mere tukre hain

Wo kirchi kirchi khwaab mre

Kuch umeedein tooti tooti see

Aur ashkon ki eik mala hai

Wo ashaaon ke hain deep bujhe

Aur yaadon ke bikhre moti hain

Kyun aankh hui purnum teri

Chehra kyun hua ghum se bojhal?

Ye mera qeemti sarmaaya

Jeewan ki kumaai ye meri

Tum ko pasand kya aayi nahin?

Hairat se mujhe kyun takte ho!

Kya khaaya hai dhoka tum ne?

Tum dhoondhne aaye thei khushyaan

Kuch khushkun baatein khushkun lamhe?

Kyun dosh tumhein mein doon ae dost

Dhoka tou mera chehra hai

Rehti hai jis pe jhooti hansi

Dard dil mein chupa ke rakhti hoon

Aaj aayo bataaun mein tum ko

Ye roop kyun mein ne dhaara hai

Hai tabyat meri khuddaar bohat

Hamdardi bheek si lagti hai!

Jab jab ye dunya dukh deti hai

Jab jab mein is pe hansti hoon

Mein bant ti phirti hoon khushyaan

Ghum dil mein chupa ke rakhti hoon

Par dard jab hadd se barh jaata hai

Tou chupke se ro leti hoon!

 

 

 

 

دھوکا

dhoka

 

آج گھرجو آئے ہواے دوست

چپ چپ سےیوں کیوں بیٹھے ہو

کچھ پوچھنا چاہتے ہو جیسے

آنکھوں میں کیوں ہے الجھن سی

کچھ ڈحونڈھ رہی ہوں جیسے!

کیا کھوجتے ہو تم یوں ہر سو؟

کیا پوچھنا چاہتے ہو جیسے

آج آئو بتائوں میں خود تم کو

کیا میں نے جمع کر رکھا ہے

یہ دل کے میرے ٹکرے ہیں

وہ کرچی کرچی خواب مرے

کچھ امیدیں ٹوٹی ٹوٹی سی

اور اشکوں کی یہ اک مالا ہے

وہ آشائوں کے ہیں دیپ بجھے

اور یادوں کے بکھرے موتی ہیں

کیوں آنکھ ہوئی پرنم تیری

چہرہ کیوں ہوا غم سے بوجھل

یہ میرا قیمتی سرمایا

جیون کی کمائی یہ میری

تم کو پسند کیا آئی نہیں؟

حیرت سے مجھے کیوں تکتے ہو!

کیا کھایا ہے دھوکا تم نے؟

تم ڈھونڈنے آئے تھے خوشیاں!

خوش کن باتیں، خوش کن لمحے

کیوں دوش تمہیں میں دوں اے دوست

دھوکا تو میرا چہرہ ہے

رہتی ہے جس پہ جھوٹی ہنسی

درد دل میں چھپا کے رکھتی ہوں

آج آئو بتائوں میں تم کو

یہ روپ کیوں میں نے دھارا ہے؟

ہےطبیعت مری خوددار بہت

ہمدردی بھیک سی لگتی ہے

جب جب دنیا دکھ دیتی ہے

جب جب میں اس پہ ہنستی ہوں

میں بانٹتی پھرتی ہوں خوشیاں

غم دل میں چھپا کے رکھتی ہوں

پردردجب حد سے بڑھ جاتا ہے

تو چپکے سے رو لیتی ہوں!