ZEEST KI BISAAT (FOR MY READERS WHO CAN NOT READ URDU)

Zeest ki Bisaat

 

 Zeest ki bisaat par khaate rahe yun maat hum

Ke dunya waalon ki tarah jeena humein na aayeiga!

 

Kis ko humari chah hai, kis ko dikhaayein naaz hum

Jo rooth jaayein hum kabhee, kon humein munaayeiga?

 

Kis ko bataoon mein yahaan, is dil pe kitne zakhm hain

Hai kon charagar mera, kon marhum lagaaeiga?

Raah e wafa kaisi ajab, raahi bhee hum raahbar bhee hum

Bhatak gaye jo hum kabhee, saheeh raah kon dikhaayeiga?

 

Marne ke baad jab kaheen, zikr jo chir gaya mera

Mera khayaal dil pe tere eik bojh saa ban jaayeiga!

 

Anakahi see eik baat sunne ko muntazir hoon mein

Guzar gaya jo waqt ye phir laut kar naa aayeiga!

ZEEST KI BISAAT!

Zeest ki Bisaat

Zeest ki bisaat par khaate rahe yun maat hum

Ke dunya waalon ki tarah jeena humein na aayeiga

 

Kis ko humari chah hai, kis ko dikhaayein naaz hum

Jo rooth jaayein hum kabhee, kon humein munaayeiga

 

Kis ko bataoon mein yahaan, is dil pe kitne zakhm hain

Hai kon charagar mera, kon marhum lagaaeiga

 

Raah e wafa kaisi ajab, raahi bhee hum raahbar bhee hum

Bhatak gaye jo hum kabhee saheeh raah kon dikhaayeiga

 

Marne ke baad jo kabhee, zikr chir gaya mera

Mera khayaal dil pet ere eil bojh saa ban jaayeiga

 

Anakahi see eik baat sunne ko muntazir hoon mein

Guzar gaya jo waqt ye phir laut kar naa aayeiga!

زیست کی بساط

Image

زیست کی بساط پر کھاتے رہے یوں مات ہم
کہ دنیا والوں کی طرح جینا ہمیں نہ آئیگا

کس کو ہماری چاہ ہے کس کو دکھائیں ناز ہم
جو روٹھ جائیں ہم کبھی کون ہمیں منائیگا

کس کو بتائوں میں یہاں کہ دل پہ کتنے زخم ہیں
ہے کون چاہ گر مرا، کون مرھم لگایئگا

راہِ وفا کیسی عجب، راہی بھی ہم، راہبر بھی ہم
بھٹک گئے جو ہم کبھی،صحیح راہ کون دکھائیگا 

مرنے کے بعد جو مرے، ذکرچھڑ گیا مرا
مرا خیال دل پہ ترے اک بوجھ سا بن جائیگا

انکہی سی اک بات جو سننے کو منتظر ہوں میں 
گزر گیا جو وقت یہ، پھر لوٹ کر نہ آیئگا

DHOKA!

Image

Aaj ghar jo aaye ho ae dost

Chup chup se yoon kyun bethe ho?

Kuch poochna chahte ho jaise

Aankhon mein kyun hai uljhan si

Kuch poochna chahti hon jaise

Kya khojte ho tum yun har su

Aaj aayo dikhaayum mein khud tum ko

Kya mein ne juma kar rakha hai

Ye dil ke mere tukre hain

Wo kirchi kirchi khwaab mre

Kuch umeedein tooti tooti see

Aur ashkon ki eik mala hai

Wo ashaaon ke hain deep bujhe

Aur yaadon ke bikhre moti hain

Kyun aankh hui purnum teri

Chehra kyun hua ghum se bojhal?

Ye mera qeemti sarmaaya

Jeewan ki kumaai ye meri

Tum ko pasand kya aayi nahin?

Hairat se mujhe kyun takte ho!

Kya khaaya hai dhoka tum ne?

Tum dhoondhne aaye thei khushyaan

Kuch khushkun baatein khushkun lamhe?

Kyun dosh tumhein mein doon ae dost

Dhoka tou mera chehra hai

Rehti hai jis pe jhooti hansi

Dard dil mein chupa ke rakhti hoon

Aaj aayo bataaun mein tum ko

Ye roop kyun mein ne dhaara hai

Hai tabyat meri khuddaar bohat

Hamdardi bheek si lagti hai!

Jab jab ye dunya dukh deti hai

Jab jab mein is pe hansti hoon

Mein bant ti phirti hoon khushyaan

Ghum dil mein chupa ke rakhti hoon

Par dard jab hadd se barh jaata hai

Tou chupke se ro leti hoon!

 

 

 

 

دھوکا

dhoka

 

آج گھرجو آئے ہواے دوست

چپ چپ سےیوں کیوں بیٹھے ہو

کچھ پوچھنا چاہتے ہو جیسے

آنکھوں میں کیوں ہے الجھن سی

کچھ ڈحونڈھ رہی ہوں جیسے!

کیا کھوجتے ہو تم یوں ہر سو؟

کیا پوچھنا چاہتے ہو جیسے

آج آئو بتائوں میں خود تم کو

کیا میں نے جمع کر رکھا ہے

یہ دل کے میرے ٹکرے ہیں

وہ کرچی کرچی خواب مرے

کچھ امیدیں ٹوٹی ٹوٹی سی

اور اشکوں کی یہ اک مالا ہے

وہ آشائوں کے ہیں دیپ بجھے

اور یادوں کے بکھرے موتی ہیں

کیوں آنکھ ہوئی پرنم تیری

چہرہ کیوں ہوا غم سے بوجھل

یہ میرا قیمتی سرمایا

جیون کی کمائی یہ میری

تم کو پسند کیا آئی نہیں؟

حیرت سے مجھے کیوں تکتے ہو!

کیا کھایا ہے دھوکا تم نے؟

تم ڈھونڈنے آئے تھے خوشیاں!

خوش کن باتیں، خوش کن لمحے

کیوں دوش تمہیں میں دوں اے دوست

دھوکا تو میرا چہرہ ہے

رہتی ہے جس پہ جھوٹی ہنسی

درد دل میں چھپا کے رکھتی ہوں

آج آئو بتائوں میں تم کو

یہ روپ کیوں میں نے دھارا ہے؟

ہےطبیعت مری خوددار بہت

ہمدردی بھیک سی لگتی ہے

جب جب دنیا دکھ دیتی ہے

جب جب میں اس پہ ہنستی ہوں

میں بانٹتی پھرتی ہوں خوشیاں

غم دل میں چھپا کے رکھتی ہوں

پردردجب حد سے بڑھ جاتا ہے

تو چپکے سے رو لیتی ہوں!

 

 

 

 

 

DIL KI AAWAAZ( Nazm in Roman Urdu)

Dard e Dil ko mere kuch dawa chahiye
Eik nigah e karam Ae Khuda chaihye

Raat taareek hai raah dikhti nahin
Kamli Waale ke rukh ki zia chaihye

Askh ankhon se gir gir ke kehte hain ye
Bas humein Daaman e Mustufa(S.A.W) chaihye

Hai safeena mera beech toofan ghira
Ab Muhammad (S.A.W) ko deni sada chaihye

Mile shehr e Madina mein do gaz zameen
Aur hum ghum ke maaron ko kya chaihye

Zeest eik bojh hai hum se uthta nahin
Umr ho mukhtasir ye dua chaihye!

دل کی آواز

Dil ki awaz

دردِ دل کو مرے کچھ دوا چاہئے

اک نگاہِ کرم اے خدا چاہئے

رات تاریک ہے راہ دکھتی نہیں
کملی والےصل کے رخ کی ضیا چاہئے

اشک آنکھوں سے گر گر کے کہتے ہیں یہ
بس ہمیں دامنِِِ مصطفٰیصلچاہئے

ہے سفینہ مرا بیچ طوفاں گھرا
اب محمدصلکو دینی صدا چاہئے

ملے شہر ِ مدینہ میں دو گز زمیں
اور ہم غم کے ماروں کو کیا چاہئے؟

زیست اک بوجھ ہے ہم سے اٹھتا نہیں
عمر ہو مختصر یہ دعا چاہئے

 

 

 دنیا میں تیرے جیسا کوئی دوسرا نہیں ہے

Aside

My darling Grandaughter has finished school today with flying colors! She has made the family proud with Straight As Ma sha Allah… the best time to re blog the poem I wrote for her when she was a child!

Time flies!Its been nearly three years since I posted this blog with my poem.  My darling has made the family proud again! Alhumdulillah for the happy moments.

دنیا میں تیرے جیسا 
کوئی دوسرا نہیں ہے
مرے دل کو ہیں لبھاتی
ہر دم تری ادائیں
 
  ہنستی ہے جب بھی تو تو
  لگتا ہے مجھ کو ایسا
  جھونکے ہوا کے جیسے 
  کلیوں کو گدگائیں
 
  رونا بھی تیرا مجھ کو
  لگتا ہے اتنا پیارا
  شبنم کے قطرے جیسے 
  پھولوں کا منھ دھلائیں
 
ہے نیند میں بھی تیری
ایسی ادا نرالی
جنت کی حوریں جیسے 
لوری تجھے سنائیں
 
آنکھوں میں تیری گڑیا
ہے ایسی اک چمک سی
سورج کی کرنیں جیسے
پانی پہ جھلملائیں
 
ہو ماں کا سایہ سر پہ
پاپا رہیں سلامت
نانی تری خدا سے
ہر دم کرے دعائیں
 
پھولوں کے پالنے میں
گزرے یوں تیرا بچپن
پریوں کی رانی آ کر
جھولا تجھے جھلائیں
 
تو خوش رہے ہمیشہ
دکھ جھیلنے کو میں ہوں
لے لوں اے سعدیہ میں
ساری تری بلائیں
 

SEEP KHAALI HUMARA MUQADDAR BANE… Ghazal in Roman Urdu


Seep khaali humara muqaddar banei
Aur moti na jaane kahan kho gaye!

Jaagti ankhon se dekhaa tha jin ko kabhee
Wo saare sapne na jaane kahan kho gaye!

Mein wo tasweer hun rang jis mein nahin
Rang dhanak ke na jaane kahan kho gaye!

Itni be-kaif thee daastaan- hayyat
Sunne waale na jaane kahan kho gaye!

Pohonch jaayeinge eik din humein zoum tha
Ruste manzil ke na jaane kahan kho gaye!

سیپ خالی ہمارا مقدر بنے

سیپ خالی ہمارا مقدر بنے
اور موتی نہ جانے کہاں کھو گئے 


جاگتی آنکھوں سے دیکھا تھا جن کو کبھی
وہ سارے سپنے نہ جانے کہاں کھو گئے 


میں وہ تصویر ہوں رنگ جس میں نہیں
رنگ دھنک کے نہ جانے کہاں کھو گئے 


اتنی بے کیف تھی داستان۔حیات
سننے والے نہ جانے کہاں کھو گئے 


پہنچ جائینگے اک دن ہمیں زعم تھا
رستے منزل کے نہ جانے کہاں کھو گئے