آئینہ کا سوال…a ghazal from Ankahi Baatein

aainaa

آ ئینہ دیکھتی ہوں میں تو ٹھٹک جاتی ہوں

ایک انجان سی صورت نظر آتی ہے مجھے

حیراں ہو کر میں کرتی ہوں یہ خود سے سوال

دکھی کر دیتا ہے مجھ کو میرا اپنا ہی سوال

یہ جو چہرہ ہے یہ مرا چہرہ تو نہیں

یہ جو آنکھیں ہیں یہ مری آنکھیں تو نہیں

اس نئے چہرے کا تو لگتا ہے ہر اک نقش اداس

دھواں دیتے نظر آتے ہیں نگاہوں کے چراغ

میری آنکھوں میں تو رہتا تھا تبسم رقصاں

لب پہ رہتی تھی ہنسی کھلتے گلابوں کی طرح

خامشی میں مری ہوتی تھیں ہزاروں باتیں

چہچہاتی پھرتی تھی میں کسی بلبل کی طرح

ہر طرف میں تو جلاتی تھی محبت کے چراغ

میں سمجھتی تھی زندگی خوشیوں کا ہے نام

ہر طرف پھول ہیں مجھ کو کانٹوں سے کیا کام

دکھ کتنے ہیں مقدر میں مجھے معلوم نہ تھا

زندگی کا یہ روپ بھی ہے، سوچا ہی نہ تھا

کھائے جب زخم تو زیست ہے کیا، یہ میں نے جانا

پھر بھی تھے عزم جواں، ہر مشکل کو آسان جانا

ہنس کے سہتی رہی جو زخم زندگی دیتی گئی

اپنے اشکوں کو ھنسی میں میں چھپاتی گئی

شکوہ کرنا نہ کبھی دل کو یہ سمجھاتی رہی

کبھی راہ میں ترے بھی جلینگے محبت کے چراغ

وقت بہت بیت گیا تو میں نے یہ حقیقت جانی

اس جہاں میں وفا کی کوئی قیمت ہی نہیں

تلخیاں گھلتی گئیں کچھ اس طرح دل کے اندر

اک اک کر کے بجھے سب وہ محبت کے چراغ

اب ہے آئینہ اور اک اجنبی چہرہ ہے

جس کے ہر نقش سے ابھرتا ہے اذیت کا سراغ

اور یہ چہرہ مجھ سے کرتا ہے ہردم یہ سوال

ہے کوئی جو کہ دے اس کے سوالوں کا جواب

وقت کے صحرا میں کہاں کھو گیا تیرا وہ وجود

ہر طرف جو کہ جلاتا تھا محبت کے چراغ

Advertisements

ZEEST KI BISAAT!

Zeest ki Bisaat

Zeest ki bisaat par khaate rahe yun maat hum

Ke dunya waalon ki tarah jeena humein na aayeiga

 

Kis ko humari chah hai, kis ko dikhaayein naaz hum

Jo rooth jaayein hum kabhee, kon humein munaayeiga

 

Kis ko bataoon mein yahaan, is dil pe kitne zakhm hain

Hai kon charagar mera, kon marhum lagaaeiga

 

Raah e wafa kaisi ajab, raahi bhee hum raahbar bhee hum

Bhatak gaye jo hum kabhee saheeh raah kon dikhaayeiga

 

Marne ke baad jo kabhee, zikr chir gaya mera

Mera khayaal dil pet ere eil bojh saa ban jaayeiga

 

Anakahi see eik baat sunne ko muntazir hoon mein

Guzar gaya jo waqt ye phir laut kar naa aayeiga!

زیست کی بساط

Image

زیست کی بساط پر کھاتے رہے یوں مات ہم
کہ دنیا والوں کی طرح جینا ہمیں نہ آئیگا

کس کو ہماری چاہ ہے کس کو دکھائیں ناز ہم
جو روٹھ جائیں ہم کبھی کون ہمیں منائیگا

کس کو بتائوں میں یہاں کہ دل پہ کتنے زخم ہیں
ہے کون چاہ گر مرا، کون مرھم لگایئگا

راہِ وفا کیسی عجب، راہی بھی ہم، راہبر بھی ہم
بھٹک گئے جو ہم کبھی،صحیح راہ کون دکھائیگا 

مرنے کے بعد جو مرے، ذکرچھڑ گیا مرا
مرا خیال دل پہ ترے اک بوجھ سا بن جائیگا

انکہی سی اک بات جو سننے کو منتظر ہوں میں 
گزر گیا جو وقت یہ، پھر لوٹ کر نہ آیئگا

DHOKA!

Image

Aaj ghar jo aaye ho ae dost

Chup chup se yoon kyun bethe ho?

Kuch poochna chahte ho jaise

Aankhon mein kyun hai uljhan si

Kuch poochna chahti hon jaise

Kya khojte ho tum yun har su

Aaj aayo dikhaayum mein khud tum ko

Kya mein ne juma kar rakha hai

Ye dil ke mere tukre hain

Wo kirchi kirchi khwaab mre

Kuch umeedein tooti tooti see

Aur ashkon ki eik mala hai

Wo ashaaon ke hain deep bujhe

Aur yaadon ke bikhre moti hain

Kyun aankh hui purnum teri

Chehra kyun hua ghum se bojhal?

Ye mera qeemti sarmaaya

Jeewan ki kumaai ye meri

Tum ko pasand kya aayi nahin?

Hairat se mujhe kyun takte ho!

Kya khaaya hai dhoka tum ne?

Tum dhoondhne aaye thei khushyaan

Kuch khushkun baatein khushkun lamhe?

Kyun dosh tumhein mein doon ae dost

Dhoka tou mera chehra hai

Rehti hai jis pe jhooti hansi

Dard dil mein chupa ke rakhti hoon

Aaj aayo bataaun mein tum ko

Ye roop kyun mein ne dhaara hai

Hai tabyat meri khuddaar bohat

Hamdardi bheek si lagti hai!

Jab jab ye dunya dukh deti hai

Jab jab mein is pe hansti hoon

Mein bant ti phirti hoon khushyaan

Ghum dil mein chupa ke rakhti hoon

Par dard jab hadd se barh jaata hai

Tou chupke se ro leti hoon!

 

 

 

 

سیپ خالی ہمارا مقدر بنے

سیپ خالی ہمارا مقدر بنے
اور موتی نہ جانے کہاں کھو گئے 


جاگتی آنکھوں سے دیکھا تھا جن کو کبھی
وہ سارے سپنے نہ جانے کہاں کھو گئے 


میں وہ تصویر ہوں رنگ جس میں نہیں
رنگ دھنک کے نہ جانے کہاں کھو گئے 


اتنی بے کیف تھی داستان۔حیات
سننے والے نہ جانے کہاں کھو گئے 


پہنچ جائینگے اک دن ہمیں زعم تھا
رستے منزل کے نہ جانے کہاں کھو گئے

Ye Koi Na Jaane! Ghazal in Roman Urdu

Jo Labb pe hansee hai sab hi dekhte hain
Jo dil pe guzarti hai koi na jaane

Hujum mere gird doston ka hai phir bhee
Mein Tanha hun kitni ye koi na jaane

Tanhai mein aksar hum rote hain kitna
Jab mehfil mein bethein ye koi na jaane

Ye bechein din aur ye bekhwab raatein
Huin kyun muqaddar ye koi na jaane

Thapak ke sulana har nayi aarzu ko
Hai dushwaar kitna ye koi na jaane

Kabhee ye bhee phoolon se zyaada tha naazuk
Hua dil kyun pathar ye koi na jaane!!

EIK MEHERBAAN HAI MERA! (For those who can not read Urdu) Nazm from ANKHAI BAATEIN

EIK MEHERBAAN HAI MERA!

Bekhwaab taareek raaton ki tanhai mein

Dard jab hadd se guzar jaata hai

Roshni dur tak nazar aati nahin

Umeed koi bhee bar aati nahin

Eik meherbaan hai mera

Jis ke narm seene mein chupa ke mein chehra apna

Bahaa leti hoon chund aansoo

Aur keh deti hun saare apne dukh such

Par wo ajab dost mera

Karta nahin mujh se koi bhee sawaal

Kehta nahin wo kuch bhee mujh se

Bas baree khamoshi se

Sunta rehta hai mere shikwe saare

Aur apni narm si aaghosh mein

Bohat pyar baree narmee se

Jazb kar leta hai mere saare aansoo

Baant leta hai wo sab bojh

Jo hain dil pe mere

Mera takya jo mera ghumkhwaar bhee hai!

Mera takya jo mera humraaz bhee hai!!

—————————–

 Translation

In the sleepless dark nights of pain and despair, 

When my heartache knows no bounds,

I can not find any light in my path,

Nor do I have any hope left in my heart,

I have a well-wisher,

In whose soft bosom I hide my face,

And shed a few tears,

And share with him my pains and sorrows,

But strangely this old friend of mine,

Never asks me any questions,

Neither does he say anything,

But very queitly,

Listens to all my complaints,

And with great love and care,

Allows all my tears to sink into his soft bosom,

In this manner he shares with me

All the pain my heart is heavy with,

My pillow who shares all my pain and woes

My pillow who is a keeper of all my secrets!

 

 

 

 

اک مہرباں ہے مرا

بےخواب تاریک راتوں کی تنہائی میں
درد جب حد سے گزر جاتا ہے
روشنی دور تک نظر آتی نہیں
امید کوئی بھی بر آتی نہیں
اک مہرباں ہے مرا
جس کے نرم سینے میں چھپا کے میں چہرا اپنا
بہا لیتی ہوں چند آنسو
اور کہہ دیتی سب اپنے دکھ سکھ
اور وہ دوست مرا
کرتا ہی نہیں کوئی بھی سوال
کہتا نہیں وہ کچھ بھی مجھ سے
بڑی خاموشی سے
سنتا ہے مرے شکوے سارے
اور اپنی نرم آغوش میں 
بہت پیار بڑی نرمی سے
جذب کر لیتا مرے سارے آنسو
بانٹ لیتا ہے وہ سب بوجھ
جو ہیں دل پہ مرے
میرا تکیہ جو مرا ہمراز بھی ہے
میرا تکیہ جو مرا غمخوار بھی ہے

ماں کی دعا


ماں کے دامن میں ہوتی ہے وسعت بہت 
ڈال دو میری جھولی میں جو تم کو ہیں غم
چن لوں پلکوں سے رستے میں کانٹے ہیں جو
پاس آنے نہ دوں میں تمہارے یہ غم


جی رہی ہوں میں صرف تمہارے لئے
تم پریشان ہو، یہ مجھ کو گوارہ نہیں
توڑ لائوں میں تارے گر ہو بس میں مرے
کیا کروں میرے بچوں یہ ممکن نہیں


میری جان یہ اس دنیا کا دستور ہے
جو بھی ڈرتا ہے اور اس کو ڈراتی ے یہ
ہنس کے ہر دکھ کا سامنا تم کرو
کہ جو بھی روتا ہے اور اس کو رلاتی ہے یہ


میں نے مانا کہ وقت یہ ہے مشکل بہت
رکھو ہمت جواں، آگے بڑھتے رہو
مشکلیں ساری آساں ہو جائینگی
تم دعائیں مری ساتھ لے کے چلو


نائو آج بیچ طوفاں گھر گئی ہے تو کیا
ناخدا ہے خدا میرا رکھو یقین
اک دن ساحل پہ پہچیگی کشتی ضرور
اپنی ماں کی دعائوں پہ رکھو یقین


دور یہ سخت جو ہے، یہ گزر جائیگا
چومیگی اک دن منزل تمہارے قدم
کہ ہے دعا ماں کی جس کے بھی ہم قدم
اس کا حامی ہے اللہ، خود اس کی قسم

AEY NAATWAAN MERE DIL…!! (For my readers who can not read Urdu)

 

Aey natwaan mere dil

Himmat naa haarna tu

Do char aur qadam hain

Bas saamne hai manzil

Maana ke raah kathin hai

Lamba bohat safar hai

Par mushkilein ye teri

Ab khatm hain hone waali

Ye maanti hoon mein ke

Maazi tera ajab hai

Haalaat ke sitam se

Kuch dost ke karam se

Sab khwaab toote tera

Bikhra tu reza reza

Khushyon ki aarzu mein

Phirta raha tu barson

Par kuch hua na hasil

Tujh ko in kaawishon se

Manzil na paayi tu ne

Laut aaya raaston se

Halat ko teri chaha

Mein ne bohat badalna

Lekin ye kaam shayad

Tha mere bas se bahar

Par tu bara tha ziddi

Maani na haar tu ne

Dukh she ke muskurana

Har dum tha tere shewa

Bas hansna aur hansana

Har dum tha kaam tera

Phir kyun ye eik thakan see

Tujh pe hai aaj taari?

Maayusyaan ye kaisi?

Kaisi ye beqaraari?

Ye khoon jo ris raha hai

Zakhmon se aaj tere

Kar deiga yehi rangeen

Kal tere gulistan ko

Kar le yaqeen mera

Dukh ki ye inteha hai

Aur hoti hai inteha jab

Phir hoti ibtidaa hai

Bas thori aur himmat

Thora saa housla aur

Do char aur qadam hain

Bas saamne hai manzil

Aey natwaan mere dil!!

Aey naatwaan mere dil!!!