غزل

پھول سے خوشبو جدا ہوتی ہے فقط ایک بار
یہ بکھرتی ہے تو پھر سے لوٹ کر آتی نہیں


آنکھ سے آنسو جو ٹپکا،کیا وہ دامن کرتا تر
بوند سے تو پیاس صحرا کی کبھی جاتی نہیں


ہم تو تھے وہ زندہ دل غم پہ کبھی روتے نہ تھے
اب ہوا ہے کیا کہ خوشیوں پہ ہنسی آتی نہیں


خود ہی پھولوں کو مسل کر ہے یہ مالی کو گلہ
میرے گلشن میں نہ جانے کیوں بہار آتی نہیں


خواب دیکھوں تو ہو شاید زیست کی کچھ تلخی کم
کیا کروں پر نیند مجھ کو رات بھر آتی نہیں


ہے جو قسمت میں لکھا وہ پورا تو ہوگاضرور
وقت سے پہلے تو کسی کو موت بھی آتی نہیں 



Advertisements

Dil to har baat pe rone ke bahaane maange! (For my friends who can not read Urdu)

Hum to hanste hain faqat chahne waalon ke lye
Dil tou har baat pe rone ke bahaane maange

Talkhiy e zeest se ghabraye to ae dil hum ne
Meethi neendon se kuch khwaab suhaane maange

Hathkari pesh ki maange jo kabhee bhee gehne
Qaid rakhne ko bhee sayyad bahaane maange

Log bhule hain tera qissa tou hairaan kyun hai?
Nit naye roz ye dunya to fasaane maange

Dard se yun hua maanus ke gaane ke lye
Dil mera roz naye ghum ke taraane maange

Dil e betaab ko milta hi nahin mehfil mein qaraar
Dur weeraanon mein mujh se ye thikaane maange

Gar wo mil jayein kahin dar hai ke machal jaye na dil
Kin ghumon ka hisaab unse na jaane maange

Roz dete hain naye is ko khilone phir bhee
Dil wo ziddi hai ke bachpan ke zamaane maange!