SEEP KHAALI HUMARA MUQADDAR BANE… Ghazal in Roman Urdu


Seep khaali humara muqaddar banei
Aur moti na jaane kahan kho gaye!

Jaagti ankhon se dekhaa tha jin ko kabhee
Wo saare sapne na jaane kahan kho gaye!

Mein wo tasweer hun rang jis mein nahin
Rang dhanak ke na jaane kahan kho gaye!

Itni be-kaif thee daastaan- hayyat
Sunne waale na jaane kahan kho gaye!

Pohonch jaayeinge eik din humein zoum tha
Ruste manzil ke na jaane kahan kho gaye!

یہ کوئی نہ جانے

جو لب پہ ہنسی ہے سب ہی دیکھتے ہیں
جو دل پہ گزرتی ہے کوئی نہ جانے

ہجوم مرے گرد دوستوں کا ہے پھر بھی
میں تنہا ہوں کتنی یہ کوئی نہ جانے

تنہائی میں اکثر ہم روتے ہیں کتنا
جب محفل میں بیٹھیں یہ کوئی نہ جانے

یہ بیچین دن اور یہ بے خواب راتیں
ہوئے کیوں مقدر یہ کوئی نہ جانے

تھپک کہ سلانا ہر نئی آرزو کو
ہے دشوار کتنا یہ کوئی نہ جانے

کبھی یہ بھی پھولوں سے زیادہ تھا نازک
ہوا دل کیوں پتھر یہ کوئی نہ جانے