ZEEST KI BISAAT (FOR MY READERS WHO CAN NOT READ URDU)

Zeest ki Bisaat

 

 Zeest ki bisaat par khaate rahe yun maat hum

Ke dunya waalon ki tarah jeena humein na aayeiga!

 

Kis ko humari chah hai, kis ko dikhaayein naaz hum

Jo rooth jaayein hum kabhee, kon humein munaayeiga?

 

Kis ko bataoon mein yahaan, is dil pe kitne zakhm hain

Hai kon charagar mera, kon marhum lagaaeiga?

Raah e wafa kaisi ajab, raahi bhee hum raahbar bhee hum

Bhatak gaye jo hum kabhee, saheeh raah kon dikhaayeiga?

 

Marne ke baad jab kaheen, zikr jo chir gaya mera

Mera khayaal dil pe tere eik bojh saa ban jaayeiga!

 

Anakahi see eik baat sunne ko muntazir hoon mein

Guzar gaya jo waqt ye phir laut kar naa aayeiga!

ZEEST KI BISAAT!

Zeest ki Bisaat

Zeest ki bisaat par khaate rahe yun maat hum

Ke dunya waalon ki tarah jeena humein na aayeiga

 

Kis ko humari chah hai, kis ko dikhaayein naaz hum

Jo rooth jaayein hum kabhee, kon humein munaayeiga

 

Kis ko bataoon mein yahaan, is dil pe kitne zakhm hain

Hai kon charagar mera, kon marhum lagaaeiga

 

Raah e wafa kaisi ajab, raahi bhee hum raahbar bhee hum

Bhatak gaye jo hum kabhee saheeh raah kon dikhaayeiga

 

Marne ke baad jo kabhee, zikr chir gaya mera

Mera khayaal dil pet ere eil bojh saa ban jaayeiga

 

Anakahi see eik baat sunne ko muntazir hoon mein

Guzar gaya jo waqt ye phir laut kar naa aayeiga!

زیست کی بساط

Image

زیست کی بساط پر کھاتے رہے یوں مات ہم
کہ دنیا والوں کی طرح جینا ہمیں نہ آئیگا

کس کو ہماری چاہ ہے کس کو دکھائیں ناز ہم
جو روٹھ جائیں ہم کبھی کون ہمیں منائیگا

کس کو بتائوں میں یہاں کہ دل پہ کتنے زخم ہیں
ہے کون چاہ گر مرا، کون مرھم لگایئگا

راہِ وفا کیسی عجب، راہی بھی ہم، راہبر بھی ہم
بھٹک گئے جو ہم کبھی،صحیح راہ کون دکھائیگا 

مرنے کے بعد جو مرے، ذکرچھڑ گیا مرا
مرا خیال دل پہ ترے اک بوجھ سا بن جائیگا

انکہی سی اک بات جو سننے کو منتظر ہوں میں 
گزر گیا جو وقت یہ، پھر لوٹ کر نہ آیئگا

SEEP KHAALI HUMARA MUQADDAR BANE… Ghazal in Roman Urdu


Seep khaali humara muqaddar banei
Aur moti na jaane kahan kho gaye!

Jaagti ankhon se dekhaa tha jin ko kabhee
Wo saare sapne na jaane kahan kho gaye!

Mein wo tasweer hun rang jis mein nahin
Rang dhanak ke na jaane kahan kho gaye!

Itni be-kaif thee daastaan- hayyat
Sunne waale na jaane kahan kho gaye!

Pohonch jaayeinge eik din humein zoum tha
Ruste manzil ke na jaane kahan kho gaye!

سیپ خالی ہمارا مقدر بنے

سیپ خالی ہمارا مقدر بنے
اور موتی نہ جانے کہاں کھو گئے 


جاگتی آنکھوں سے دیکھا تھا جن کو کبھی
وہ سارے سپنے نہ جانے کہاں کھو گئے 


میں وہ تصویر ہوں رنگ جس میں نہیں
رنگ دھنک کے نہ جانے کہاں کھو گئے 


اتنی بے کیف تھی داستان۔حیات
سننے والے نہ جانے کہاں کھو گئے 


پہنچ جائینگے اک دن ہمیں زعم تھا
رستے منزل کے نہ جانے کہاں کھو گئے

Ye Koi Na Jaane! Ghazal in Roman Urdu

Jo Labb pe hansee hai sab hi dekhte hain
Jo dil pe guzarti hai koi na jaane

Hujum mere gird doston ka hai phir bhee
Mein Tanha hun kitni ye koi na jaane

Tanhai mein aksar hum rote hain kitna
Jab mehfil mein bethein ye koi na jaane

Ye bechein din aur ye bekhwab raatein
Huin kyun muqaddar ye koi na jaane

Thapak ke sulana har nayi aarzu ko
Hai dushwaar kitna ye koi na jaane

Kabhee ye bhee phoolon se zyaada tha naazuk
Hua dil kyun pathar ye koi na jaane!!

یہ کوئی نہ جانے

جو لب پہ ہنسی ہے سب ہی دیکھتے ہیں
جو دل پہ گزرتی ہے کوئی نہ جانے

ہجوم مرے گرد دوستوں کا ہے پھر بھی
میں تنہا ہوں کتنی یہ کوئی نہ جانے

تنہائی میں اکثر ہم روتے ہیں کتنا
جب محفل میں بیٹھیں یہ کوئی نہ جانے

یہ بیچین دن اور یہ بے خواب راتیں
ہوئے کیوں مقدر یہ کوئی نہ جانے

تھپک کہ سلانا ہر نئی آرزو کو
ہے دشوار کتنا یہ کوئی نہ جانے

کبھی یہ بھی پھولوں سے زیادہ تھا نازک
ہوا دل کیوں پتھر یہ کوئی نہ جانے

GHAZAL FROM ANKAHI BAATEIN…. (For my friends who can not read Urdu)

Phool se khushboo juda hoti hai faqat eik baar
Ye bikharti tou phir se laut kar aati nahin

Aankh se aansoo jo tapka, kya wo daaman karta tar?
Boond se tou pyaas sehra ki kabhee jaati nahin!

Hum tou thei wo zinda-dil ghum pe kabhee rotey na thei
Ab hua hai kya ke khushyon pe hansee aati nahin

Khud hi phoolon ko masal ke hai ye maali ko gila
Mere gulshan mein na jaane kyun bahaar aati nahin!

Khwaab dekhoon tou ho shayad zeest ki kuch talkhee kum
Kya karun pur neend mujh ko raat bhar aati nahin!

Hai jo qismat mein likha wo pura tou hoga zurur
Waqt se pehle tou kisi ko maut bhe aati nahin!

غزل

پھول سے خوشبو جدا ہوتی ہے فقط ایک بار
یہ بکھرتی ہے تو پھر سے لوٹ کر آتی نہیں


آنکھ سے آنسو جو ٹپکا،کیا وہ دامن کرتا تر
بوند سے تو پیاس صحرا کی کبھی جاتی نہیں


ہم تو تھے وہ زندہ دل غم پہ کبھی روتے نہ تھے
اب ہوا ہے کیا کہ خوشیوں پہ ہنسی آتی نہیں


خود ہی پھولوں کو مسل کر ہے یہ مالی کو گلہ
میرے گلشن میں نہ جانے کیوں بہار آتی نہیں


خواب دیکھوں تو ہو شاید زیست کی کچھ تلخی کم
کیا کروں پر نیند مجھ کو رات بھر آتی نہیں


ہے جو قسمت میں لکھا وہ پورا تو ہوگاضرور
وقت سے پہلے تو کسی کو موت بھی آتی نہیں 



دل تو ہر بات پہ رونے کے بہانے مانگے

ہم تو ہنستے ہیں فقط چاہنے والوں ک لئے
دل تو ہر بات پہ رونے کے بہانے مانگے

تلخیٴ زیست سے گھبرا ئے تو اے دل ہم نے
میٹھی نیندوں سے تھےکچھ خواب سہانے مانگے

ہتھکڑی پیش کی مانگے جو کبھی بھی گہنے
قید رکھنے کو بھی صیاد بہانگے مانگے

لوگ بھولے ہیں تیرا قصہ تو حیراں کیوں ہے
نت نئے روز یہ دنیا تو فسانے مانگے

درد سےیوں ہوا مانوس کہ گانے کے لئے
دل مرا روز نئے غم کے ترانے مانگے

دل۔بیتاب کو ملتا نہیں محفل میں قرار
دور ویرانوں میں مجھ سے یہ ٹھکانے مانگے

گر وہ مل جائیں کہیں ڈر ہے کہ مچل جائے نہ دل
کن غموں کا یہ حساب ان سے نہ جانے مانگے

روز دیتے ہیں نئے اس کو کھلونے پھر بھی
دل وہ ضدی ہے کہ بچپن کے زمانے مانگے